ایک سو دسواں کینٹن میلہ: ایک مستحکم تقریب دو طرفہ تجارت کے لیے نیک شگون

AsiaNet 47430

گوانگ چو، چین، 22 نومبر 2011ء/پی آرنیوزوائر-ایشیا-ایشیانیٹ/

حال ہی میں اختتام کو پہنچنے والے 110 ویں کینٹن میلے نے چین اور دنیا کے درمیان دو طرفہ تجارت کو بڑھانے کے نئے ریکارڈ مرتب کر دیے ہیں۔ 4 نومبر کو ختم ہونے والی چین کی سرفہرست نمائش نے تقریباً 38 ارب ڈالرز کا کاروبار پیدا کیا، جو بہار میں منعقدہ 109 ویں سیشن سے 3 فیصد زیادہ ہے۔

تاریخی موقع کے لیے اعداد و شمار جامع طور پر اوپر تھے۔ 210 ممالک اور خطوں سے تعلق رکھنے والے تقریباً 2 لاکھ 10 ہزار خریداروں نے شرکت کی جن میں دنیا کے سرفہرست 250 خوردہ فروشوں میں سے 100 سے زائد بھی شامل تھے۔ ایک تہائی خریدار چین کے سرفہرست 10 تجارتی شراکت داروں  میں سے تھے – پہلے سے کہیں زیادہ معاہدے جاپانی، روسی، برازیلی اور بھارتی خریداروں نے کیے۔ مجموعی طور پر افریقی، ایشیائی اور لاطینی امریکہ کے خریداروں کی جانب سے کیے گئے معاہدے تقریباً 40 فیصد بڑھے۔

چینی اور بین الاقوامی سیاسی و کاروباری رہنماؤں کی غیر معمولی تعداد نے میلے میں شرکت کی، جو ابھرتی ہوئی معاشی قوت کی حیثیت سے چین کی پوزیشن کو ظاہر کر رہی ہے۔ عالمی معیشت کے سستی سے بحال ہونے کے اس دور میں اس تقریب نے عالمی کاروبار کو تقویت بخشنے میں اہم کردار ادا کیا۔ اپنے افتتاحی خطاب میں وزیر اعظم وین جیا باؤ نے چین پر درآمدات و برآمدات میں توازن کی ضرورت پر زور دیا جبکہ صدر ہو جن تاؤ نے بین الاقوامی تجارتی تعلقات کو مضبوط کرنے پر کینٹن میلے کے 55 سال تک نبھائے گئے کردار کو سراہا۔ انہوں نے کہا کہ چین اپنے جاری 12 ویں پنج سالہ منصوبے کے دوران مزید اجرا کے ذریعے آگے بڑھے گا۔

یہ سال کینٹن میلے کا 55 واں اور عالمی تجارتی تنظیم (ڈبلیو ٹی او) میں چین کی شمولیت کا 10 واں سال ہے۔ تقریب کے موقع پر انتہائی اہم شخصیات کو ڈبلیو ٹی او میں چین کے تبدیل ہوتے ہوئے کردار پر بلائے گئے فورمز میں مدعو کیا، جن میں چین-جاپان اقتصادی تعاون، چین میں لاطینی امریکی برآمدات، اور چینی صوبوں اور امریکی ریاستوں کے درمیان تبادلے جیسے موضوعات پر تبادلہ خیال کیا گیا۔

غیر معمولی بین الاقوامی ترویج کے بعد 110 ویں کینٹن میلے نے 58 ہزار سے زائد تجارتی بوتھ قائم کیے۔ تقریباً 50 ممالک اور خطوں کے 500 سے زائد نمائش کنندگان میلے کے خصوصی درآمدی علاقے میں موجود تھے۔ مہمانوں اور اعلیٰ شخصیات اور کاروباروں نے شرکت کو آسان بنانے اور تجارت کو سہولیات بخشنے کے لیے انتہائی اعلیٰ معیار کی خدمات کا لطف اٹھایا۔

چین کے وزیر تجارت چین ڈیمنگ نے ایونٹ میں شرکت کے دوران کہا کہ “کینٹن میلہ کا پھیلتا ہوا درآمدات کا حصہ مجموعی طور پر چین کے درآمدی شعبے پر بڑا اثر ڈالے گا۔ اس حصے میں جاری کامیابی چین کی دو طرفہ تجارت کے توازن میں جزوِ لازم ہے۔”

ذرائع ابلاغ کے سوالات

110 ویں کینٹن امپورٹ اینڈ ایکسپورٹ (کینٹن) فیئر:

15 اکتوبر تا 4 نومبر 2011ء

ویب: www.cantonfair.org.cn/en/

ذریعہ: چائنا فارن ٹریڈ سینٹر (CFTC)