ذمہ دارانہ مالیات کے لیے حد سے زیادہ قرضہ جات سے بچنے کی خاطر صنعت متحرک، سی جی اے پی

AsiaNet 46791

واشنگٹن، 14 اکتوبر 2011ء/پی آرنیوزوائر-ایشیانیٹ/

دنیا کے غریبوں کے لیےمالیاتی رسائی کو بہتر بنانے سے وابستہ عالمی صنعتی انجمن سی جی اے پی کے مطابق مائیکروفنانس صنعت ذمہ دارانہ مالیات، بشمول صارفی حفاظت کے اقدامات اور زیادہ قرضوں سے روکنے کی کوششوں پر اپنی  سعی میں اضافہ کر رہی ہے۔ نئی مارکیٹوں میں مائیکروفنانس کی تیز تر پیشرفت کے محرکات کو ذمہ دار مالیاتی خدمات تک رسائی فراہم کرنے کی از سرنو تاکید کا ساتھ حاصل ہے جو غریب افراد کے لیے زبردست فوائد کی حامل ہوگی۔

(لوگو: http://photos.prnewswire.com/prnh/20110412/MM81963LOGO)

نئی دستاویز میں سی جی اے پی نے ذمہ دارانہ فراہمی پر یہ نئی تاکید ضابطہ اخلاق سے پابند مائیکروفنانس ادارے، بہتر ضوابط، اور صارفی آگہی اور مالیاتی  گنجائش کو بہتر بنانے کی کوششوں کو تشکیل دے گی۔

اپنی تازہ ترین دستاویز، ذمہ دارانہ مالیات: قواعد کو عملی شکل دینا، میں سی جی اے پی کہتا ہے کہ یہ ارتقاء اداروں کو بھی فائدہ دے گا، کیونکہ صارفین کے تحفظ میں اضافہ ان کی وفاداری اور مالیاتی خدمات کی وسیع تر رینج کی طلب کو بڑھائے گا۔ صارفی تحفظ پیش کرنے میں ناکام ہونے والے ادارے اپنی مارکیٹوں کے لیے حکومت کے سخت ضوابط کے خطرے سے دوچار ہو سکتے ہیں، اور سرمایہ کاروں تک رسائی بھی کھو سکتے ہیں جن کی توجہ غریبوں کی مدد کے ساتھ ساتھ مستحکم آمدنی حاصل کرنے کے دہرے نتیجوں پر مرکوز ہے۔

سی جی اے پی دستاویز کے مصنفین میں سے ایک کیٹ میک کی نے کہا کہ “اب کریڈٹ بیورو جیسے اداروں کے لیے اب بھی روایتی بچت یا قرضہ جات کھاتوں سے محروم 2.7 ارب افراد کو ذمہ دارانہ مالیات کی فراہمی کو نظر میں رکھتے ہوئے بہتر ضوابط کے لیےبہتر داخلی کنٹرولز کی ضرورت کہیں زیادہ حقیقی سمجھ موجود ہے۔ جب یہ مسائل متوقع اور منظم شدہ نہیں ہوں گے، تو بحران جنم لے گا اور قرضہ حاصل اور دینے والے دونوں نقصان برداشت کریں گے۔

کئی ادارے اب پا چکے ہیں کہ آگے بڑھنے کے راستے کو ایسے طریقے کی ضرورت ہے جو غریب صارفین کی خصوصی زد پذیری کے حوالےسے حساس ہو۔

مثال کے طور پر پاکستان مائیکروفنانس نیٹ ورک کے اراکین کے قرضہ جات کی کارکردگی میں شدید خرابی سے متاثر ہونے کے بعد صنعتی ایسوسی ایشن نے ایک صارفی تحفظ کی مہم شروع کی جس کا مقصد ایک رضاکارانہ ضابطہ اخلاق کے ذریعے مائیکرفنانس اداروں کی مشقوں کو بہتر بنانا  ہے۔ عملے کی تربیت کو بہتر بنایا جا رہا ہے، نرخوں کی زیادہ شفاف پالیسیاں متعارف کروائی جا رہی ہے، کہیں زیادہ سخت مانیٹرنگ ہو رہی ہے، اور صارفین کی شکایتوں کا نیا نظام قرضہ حاصل کرنے والے افراد کی مدد اور دینے والوں کے مسائل حل کرنے میں مدد کا خواہا ں ہے۔ ایک اور اہم عنصر کریڈٹ بیورو کو متعارف کروایا جانا ہے جو مائیکروفنانس اداروں کو ممکنہ قرضہ حاصل کرنے والوں کا بہتر اندازہ لگانے میں مدد دیتا ہے۔

بوسنیا میں پارٹنر مائیکروکریڈٹ فاؤنڈیشن نے تسلیم کیا ہے کہ صارف کے لیے خطرہ دراصل ادارے کے لیے خطرہ بھی ہے اور اس لیے قرضہ لینے والوں کے عملی دوروں کا اہتمام کیا ہے اور بے ترتیب اسپاٹ چیکنگ اور شاخوں کے دوروں کے لیے داخلی آڈیٹرز کی بھرتی   کی گئی ہے، عملے اور صارفین کے شعور میں اضافہ اور ساتھ ساتھ مصنوعات کو بہتر بنانے بھی کام بھی کیا جا رہا ہے۔

عالمی سطح پر بھی بہتر صارفی تحفظ، بہتر شفافیت اور شرح سود کے انکشاف، ساتھ ساتھ مالیاتی خواندگی کو بہتر بنانے کی کوششوں کے لیے نئے اہم منصوبے سامنے لائے جا رہے ہیں۔ شعبے میں نرخوں کی شفافیت کو بہتر بنانے کے لیے مائیکروفنانس ٹرانسپیرنسی منصوبہ عالمی سطح پر 28 ممالک میں کام کر رہا ہے، اور  ایک ہزار سے زائد قرضہ جاتی مصنوعات کا ڈیٹا رکھتا ہے جو 50 ملین سے زائد صارفین کو فروخت کی گئی ہیں۔ تقریباً 700 مالیاتی خدمات فراہم کنندگان، اور 130 فنڈرز اسمارٹ کمپین کی پیش کردہ کلائنٹ پروٹیکشن پرنسپلز کے نفاذ کے لیے دستخط کر چکے ہیں۔

سی جی اے پی کا ماننا ہے کہ یہ سنجیدہ اقدامات ہیں لیکن شعبے کے تمام عاملین کو غریبوں کے لیے بہتر مالیاتی مصنوعات کی ذمہ دارانہ فراہمی کو یقینی بنانے کے لیے مزید کچھ کرنے کی ضرورت ہے۔ انٹرنیشنل فنانس کارپوریشن (IFC) کے ساتھ شراکت کے ذریعے بنائی گئی تیسری دستاویز میں سی جی اے پی نے کریڈٹ رپورٹنگ بیوروز کی ضرورت پر زور دیا ہے جو نہ صرف مرکزی بینکاری اور مالیاتی خدمات کے صارفین کا بلکہ مائیکروفنانس کے قرضہ جات حاصل کرنے والوں کا بھی احاطہ کریں۔

گزشتہ 10 سالوں میں اس ضمن میں پیشرفت کے باوجود سی جی اے پی اور آئی ایف سی نے توجہ دلائی ہے کہ صرف چند ممالک ہی ایسی کریڈٹ رپورٹنگ کوریج رکھتے ہیں جس میں کریڈٹ انفارمیشن کے تبادلے میں مائیکروفنانس کے قرضہ جات حاصل کرنے والے شامل ہیں۔ دستاویز کے مصنفین کا کہنا ہے کہ گو کہ صرف کریڈٹ رپورٹنگ کسی مارکیٹ میں کریڈٹ نظم و ضبط تخلیق یا ناقص بیمہ جاتی معیارات کی تلافی نہیں کر سکتی، تاہم یہ مائیکرولینڈرز کو بہتر قرضہ جات نکالنے، کریڈٹ خطرات سے نمٹنے اور قرضہ جات حاصل کرنے والوں میں از سر نو ادائیگی کے طاقتور فوائد تخلیق کرنے میں مدد دے سکتی ہے۔

مزید برآں جامع کریڈٹ رپورٹنگ میں اضافے کو مضبوط بنانے کے ساتھ ساتھ حکومتوں اور ریگولیٹرز پیرو میں اٹھائے گئے اقدامات کو دہرا کر قرضہ جات حاصل کرنے والے غریبوں کے صارفی تحفظ کو بہتر بنا سکتے ہیں، جہاں حال ہی میں قرضہ جات کی مارکیٹ میں شفافیت کو بہتر بنانے کے نئے قوانین متعارف کروائے گئے ہیں جو بہتر مسابقت اور مالیاتی مصنوعات کی قیمتوں کو کم کرنے میں اپنا کردار ادا کر رہے ہیں۔

البتہ سی جی اے پی کا ماننا ہے کہ اسے ہر سمت – حکومت، ریگولیٹرز، فنڈرز، مالیاتی خدمات فراہم کنندگان اور ان کے صارفین کی جانب – سے ذمہ دارانہ کردار کی ضرورت ہوگی ، تاکہ مائیکروفنانس وہ نتائج دے سکے جس کا وہ عہد کرتی ہے، یعنی ان لوگوں کو مستقبل میں بچت، قرضہ جات اور بیمہ کے ذریعے بہتر مستقبل کے مواقع دینا جو عموماً ان سے محروم ہوتے ہیں۔

سی جی اے پی دستاویزات کا مطالبہ کیجیے:

Responsible Finance: Putting Principles to Work

http://www.cgap.org/gm/document-1.9.54128/FN73.pdf

Too Much Microcredit? A Survey of the Evidence on Over-Indebtedness

http://www.cgap.org/gm/document-1.9.55377/OP19.pdf

Credit Reporting at the Base of the Pyramid

http://www.cgap.org/gm/document-1.9.55445/FORUM_1.pdf

سی جی اے پی کے بارے میں

سی جی اے پی ایک آزاد پالیسی و تحقیقی مرکز ہے جو دنیا کے غریب افراد کے لیے مالیاتی رسائی میں اضافے سے وابستہ ہے۔ اسے 30 سے زائد ڈیولپمنٹ ایجنسیوں اور نجی فاؤنڈیشنز کی مدد حاصل ہے جو غربت کے خاتمےکا مشترکہ ہدف رکھتی ہیں۔ مزید جانیے http://www.cgap.org۔

ذریعہ: سی جی اے پی

رابطہ: جینٹ تھامس

Jthomas1@cgap.org

+1-202-473-8869

+1-202-744-4829