فورڈ فاؤنڈیشن عملے کے رکن ولی موتونگا کینیا کے منصف اعلی مقرر

Asianet 45092

نیو یارک، 16 جون 2011ء/پی آرنیوزوائر-ایشیانیٹ/

فورڈ فاؤنڈیشن کے ٹرسٹیز اور عملہ اپنے ساتھی ڈاکٹر ولی ایم موتونگا کو تہہ دل سے مبارکباد پیش کرتا ہے، جن کی آج کینیائی پارلیمان نے کینیا کی عدالت عظمی کے اگلے چیف جسٹس کے طور پر تقرری کی تصدیق کر دی ہے۔

فورڈ فاؤنڈیشن کے صدر لوئس یوبیناس نے کہا کہ “دنیا بھر میں کینیا کی جمہوریت کے استحکام کا جشن منا رہے ہیں، ہمیں معلوم ہے کہ ولی اپنے ملک اور ہم وطنوں کی قانون کے ساتھ انتہائی وابستگی اور ان تمام لوگوں کے انتہائی احترام کے ساتھ کہ جن کے مقدمات ان کے ساتھ آئیں گے، کی امتیاز کے ساتھ خدمت کریں گے۔ یہ ایک غیر معمولی اعزاز ہے اور ہم جانتے ہیں کہ وہ اس کے اہل تھے۔ ہم ان کے لیے نیک تمنائیں رکھتے ہیں۔”

ڈاکٹر موتونگا عوامی انٹرویوز کے ایک مرحلے کے بعد کینیا کے جوڈیشل سروس کمیشن کی جانب سے منصف اعلی (چیف جسٹس) کے عہدے کے لیے نامزد کیے گئے تھے۔ صدر کیباکی اور وزیر اعظم اودنگا نے ان کی نامزدگی کی تصدیق کی۔ باضابطہ تقرری آج کینیا کی پارلیمان نے ووٹ کے ذریعے کی۔

منصف اعلی کی حیثیت سے ڈاکٹر موتونگا ملک کی عدالتوں کی قیادت کریں گے اور 10 سال کے عرصے کے لیے عدالت عظمی کے سربراہ کی حيثیت سے خدمات انجام دیں گے۔ عدالت عظمی کینیا کے نئے آئین کے نفاذ اور جمہوری عمل کو بڑھانے میں مرکزی کردار ادا کرے گی – جو ایسے شعبے ہیں جن کے لیے ڈاکٹر موتونگا نے اپنی پوری پیشہ ورانہ زندگی وقف کی ہے۔

ڈاکٹر موتونگا 2009ء سے نیروبی سے مشرقی افریقہ میں فورڈ فاؤنڈیشن کے نمائندے کی حیثیت سے خدمات انجام دی ہیں۔ اس سے قبل پانچ سال وہ حقوق انسانی اور حقوق نسواں کے حوالےسے پروگرام آفیسر تھے۔ ان کے کام کا ایک کلیدی شعبہ خطہ بشمول کینیا میں مشمولہ اور شفاف آئین کی حمایت ہے۔

اپنے کیریئر کی ابتداء میں وہ کینیا ہیومن رائٹس کمیشن کے ایگزیکٹو ڈائریکٹر رہے ہیں اور 1975ء سے 1998ء تک کینیا میں سول سوسائٹی کی کئی انجمنوں میں ذمہ دارانہ کردار نبھا چکے ہیں۔ وہ اوسگودے لا اسکول، یارک یونیورسٹی سے ڈاکٹریٹ آف جورسپروڈنس (D. Jur) کی صنعت اور جامعہ دارالسلام سے ایل ایل بی اور ایل ایل بی کی سندیں رکھتے ہیں۔

فاؤنڈیشن اس امر کا اعلان کرتے ہوئے بھی مسرت کا اظہار کرتی ہے کہ ڈاکٹر جوائس نیارو دفتر کے عبوری نمائندے کی حیثیت سے خدمات انجام دیں گی، جو فوری طور پر موثر ہوگا۔ ڈاکٹر نیارو 2007ء سے فورڈ فاؤنڈیشن سے وابستہ ہیں، اور مشرقی افریقہ میں میڈیا اور سول سوسائٹی کی ترقی میں مدد کر رہی ہیں۔ وہ جنوبی افریقہ کی یونیورسٹی آف وٹ واٹرزرینڈ سے ہیومنٹیز میں پی ایچ ڈی کی سند کی حامل ہیں۔

کینیا میں فورڈ فاؤنڈیشن کا دفتر 1962ء میں کھولا گیا۔ یہ افریقہ میں فاؤنڈیشن کے چار اور دنیا بھر میں 11 دفاتر میں سے ایک ہے۔

حالیہ چند سالوں میں فاؤنڈیشن نے جمہوری اصلاحات اور آئین سازی میں خطے کی پیشرفت کو تیز تر بنانے کے لیے وسیع پیمانے پر مدد کی ہے۔ ہمارے آج کے کام کا مقصد کینیا کے عوام کو اس عمل میں مدد فراہم کرنا ہے، شفافیت کو بڑھانے کی کوششوں، اور کینیائی معاشرے کے تمام افراد کو شرکت اور مواقع دینے میں ساتھ دینا ہے۔ دفتر تنزانیہ اور یوگینڈا میں عطیہ سازی کی بھی مدد کرتا ہے۔

فاؤنڈیشن، مشرقی افریقہ میں اس کے منصوبوں اور عملے کے بارے میں مزید جاننے کے لیے ملاحظہ کیجیے http://www.fordfoundation.org/regions/eastern-africa

فورڈ فاؤنڈیشن ایک آزاد، غیر منافع بخش عطیہ ساز انجمن ہے۔ وہ سماجی تبدیلی کے لیے بہادر لوگوں کے ساتھ 75 سالوں سے کام کر رہا ہے، جس میں اسے اپنے اہداف کی مدد حاصل ہے جیسا کہ جمہوری اقدار، غربت و ناانصافی کا خاتمہ ، بین الاقوامی تعاون کا فروغ، اور انسانی ترقی کو بڑھانا۔ نیو یارک میں واقع صدر دفاتر کے علاوہ فاؤنڈیشن کے دفاتر لاطینی امریکہ، افریقہ، مشرق وسطی اور ایشیا میں واقع ہیں۔

ہماری تاریخ اور انٹرایکٹو ٹائم لائن ملاحظہ کیجیے http://www.fordfoundation.org/about-us/history

http://www.fordfoundation.org

ذریعہ: فورڈ فاؤنڈیشن

رابطہ: سوزانا گریگو

فورڈ فاؤنڈیشن میڈیا چیف

s.grego@fordfoundation.org

+1-212-573-5128