جینا مینارڈ کا کلینک کی نئی عالمی کلر آرٹسٹ کے طور پر تقرر

AsiaNet 44613

نیو یارک، 16 مئی 2011ء/پی آرنیوزوائر-ایشیانیٹ/

دنیا کے معروف کاسمیٹکس برانڈز میں سے ایک کلینک (Clinique) نے میک آرٹسٹ جینا مینارڈ کو اپنی پہلی عالمی کلر آرٹسٹ مقرر کردیا ہے ۔ زیبائش کی صنعت میں ایک ابھرتی ہوئی شخصیت مینارڈ ایک دہائی پر پھیلا تجربہ اور جدید نقطہ نظر کے ساتھ کلینک میں شمولیت اختیار کریں گی۔ وہ برانڈ کے اس فلسفے میں شراکت کریں گی کہ میک اپ عورت کے قدرتی حسن کو مکمل کر سکتا ہے۔ مینارڈ اپنے میک اپ کے فن کے باعث بڑے پیمانے پر تسلیم کی جا چکی ہیں، جس کے لیے انہوں نے دنیا بھر کے اعلی ترین جریدوں، معروف شخصیات اور دنیا کے فیشن مراکز میں کیے گئے کام شامل ہیں۔

(تصویر: http://photos.prnewswire.com/prnh/20110516/NY01733)

اس نو تخلیق شدہ عہدے پر مینار کلینک کی کلر پوزیشننگ کو بڑھانے کے لیے شاندار ڈیجیٹل مواد تخلیق کرنے کا اہم کردار ادا کریں گی۔ وہ مددگار وڈیوز کو تیار کرنے میں مدد اور خود اس میں شریک ہوں گی جس میں خواتین کو اپنے مطلوبہ میک اپ کو کرنے کے فوری و آسان طریقے فراہم کیے جائیں گے۔ علاوہ ازیں وہ کلینک کی پروڈکٹ ڈیولپمنٹ، مارکیٹنگ اور ایجوکیشن ٹیموں کے ساتھ مل کر کام کریں گی تاکہ وہ نئی مصنوعات، رحجانات اور ایپلی کیشن تکنیک کے لیے ان کو تحریک دے سکیں۔

کلینک، اوریجنز اور اوجون کے گلوبل برانڈ صدر لائن گرین نے کہا کہ “جینا کلینک کے لیے بہترین انتخاب ہیں اور وہ اپنی شاندار صلاحیتوں اور بصیرت کے ساتھ ہمارے ادارے میں شمولیت اختیار کریں گی، میک اپ  کی تخلیق کے لیے ان کی نگاہ ہر عورت کے قدرتی حسن پر زور دیتی ہے ساتھ ساتھ میک اپ کے ذریعے خود اعتمادی کی تعمیر بھی دینا بھر میں عورتوں کو متاثر کر رہی ہے۔ وہ عورتوں کو ہر روز بہتر محسوس ہونے اور اچھا لگنے کے ذریعے عورتوں کو خود مختار بنانے کا کلینک کا فلسفہ بھی رکھتی ہیں۔ وہ ایسی مسکراہٹ کی حامل ہے جو کمرے کو روشن کر دے اور ایسی زندگی کی جو مثبت نظریہ رکھتی ہے – یہی وہ خوبی ہے جس کا ہم کلینک میں خیرمقدم کرتے ہیں۔”

جینا مینارڈ نے کہا کہ “میں کلینک خاندان میں شمولیت پر فخر محسوس کر رہی ہوں، میک اپ کے حوالے سے ان کی سب سے پرانی یادیں کلینک ہی سے وابستہ ہیں – کیونکہ میری والدہ اسے استعمال کیا کرتی تھیں۔ مجھے خوشی ہے کہ برانڈ کی اقدار وہی ہیں جو میں بطور ماہر فن رکھتی ہوں۔ میرا فلسفہ عورتوں کو بہت زیادہ میک اپ کیے اور تھوپے بغیر انہیں خوبصورت محسوس کروانا ہے۔ یہ ایک عورت کے انفرادی حسن پر کام کرنے کا فن ہے، جو اسے مدد دیتا ہے کہ وہ خوبصورت نظر آئے اور محسوس کرے۔ یہی حقیقت ہے جو میں کسی مشہور شخصیت یا کسی دوست کے ساتھ کام کرتے ہوئے ذہن میں رکھتی ہوں۔”

مینارڈ پر اوائل عمری ہی میں حسن کی منقلب ہونے والی قوت آشکار ہو گئی تھی۔ ان کی والدہ اپنے گھر کے باہر ایک ہیئر سیلون چلاتی تھیں، اور مینارڈ کو کچھ کچھ یاد ہے کہ والدہ کے گاہک کیسے خوش ہوتے تھے اور اپنے نئے روپ کے ساتھ اعتماد حاصل کرتے تھے۔ ان کا خوش قسمت دور اس کالج کے زمانے میں آیا جب انہیں لیجنڈری اعزاز یافتہ کاسٹیوم ڈیزائنر این روتھ سے ملنے کا موقع ملا جنہوں نے نیویارک میں ایک بلاک بسٹر فلم کے سیٹ پر ایک اسسٹنٹ کی حیثیت سے میک آپ آرٹسٹ کی پہلی ملازمت دینے میں مدد فراہم کی۔ فورا بعد انہوں نے عالمی ماہرین کی زیر نگرانی میک اپ کے فن کو سیکھا جنہوں نے ان کی فنی تکنیک کو بہتر بنایا۔ وہ کلینک کے ساتھ اپنی شراکت پر نظریں جمائے ہوئے ہیں جہاں انہیں دنیا بھر میں لاکھوں خواتین تک پہنچنے اور ان کے قدرتی حسن کو بہتر بنانے کے لیے اپنی بصیرت، معلومات اور تکنیک پیش کرنے کا موقع ملے گا۔

ٹویٹر (http://twitter.com/Clinique_US)، فیس بک(http://facebook.com/Clinique) اور یوٹیوب (http://youtube.com/Clinique) پر کلینک کے ساتھ منسلک ہو جائیے۔

کلینک کے بارے میں

1968ء میں متعارف ہونے والا ماہرین جلد کی جانب سے تخلیق کیا گیا پہلا نامور کاسمیٹک برانڈ تھا۔ کلینک کا ہدف جلد کی ہر قسم اور رنگ کو بہتر بنانے کے لیے اعلی ترین معیار کی اور موثر ترین مصنوعات کی رینج فراہم کرنا رہا ہے۔ برانڈ کی صورتحال کے مطابق بدلتی صلاحیت اور معیاری مصنوعات – جو انتہائی باریک بینی سے پرکھی جاتی ہیں اور جدید ترین سائنس کے مطابق وضع کی جاتی ہیں – نے کلینک کو دنیا کے معروف جلد کی حفاظت کرنے والے اداروں میں سے ایک بنا دیا ہے۔ تمام میک اپ اور جلدی حفاظت کی مصنوعات الرجی کے حوالے سے پرکھی ہوئی اور 100 فیصد خوشبو سے پاک ہوتی ہیں۔ کلینک تمام عمر اور نسلوں سے تعلق رکھنے والے مرد و خواتین دونوں کے لیے مصنوعات پیش کرتا ہے۔ کلینک 135 ممالک اور خطوں میں اور http://www.clinique.com  پر فروخت کی جاتی ہے۔

ذریعہ: کلینک لیبارٹریز ایل ایل سی

رابطہ: وجما بشریار، +1-212-572-6810، wbashary@clinique.com

تصویری منسلکات کے روابط:

http://asianetnews.net/view-attachment?attach-id=187115