129 ملین ماؤں اور شیر خواروں کو بچانے کے لیے کیوانیز اور یونی سیف کا اتحاد

لاس ویگاس،  24 جون/پی آرنیوزوائر-ایشیانیٹ/

خاتمے کا یہ منصوبہ (دی ایلی منیٹ پروجیکٹ) ماؤں اور بچوں کو تشنج سے محفوظ کرے گا

کیوانیز انٹرنیشنل اور یونی سیف نے ماں/نومولود کو لگنے والے تشنج (MNT) کے خاتمے کے ذریعے بچوں اور ان کی ماؤں کی زندگیاں بچانے کے لیے اتحاد تشکیل دیا ہے، یہ بیماری ہر سال 60 ہزار نومولود اور 30 ہزار ماؤں کی جان لے لیتی ہے۔ اس کا اعلان یونی سیف کے سفیر اور اداکار ٹی لیونی نے 95 ویں سالانہ کیوانیز انٹرنیشنل کنونشن کے موقع پر کیا۔

اس اعلامیہ سے متعلق ملٹی میڈیا اثاثہ جات دیکھنے کے لیے کلک کیجیے:

http://multivu.prnewswire.com/mnr/unicef/44644/

کیوانیز انٹرنیشنل کے صدر پال پیلازولو نے کہا کہ “کیوانیز اس بات پر یقین رکھتا ہے کہ کسی بچے اور ماں کو ایم این ٹی کے مضر اثرات کا سامنا نہ کرنا پڑے، کیوانیز اپنے تقریباً 6 لاکھ اراکین کو متحرک کرے گا کہ وہ ان بچوں کے انتھک ساتھی  بن جائیں اور اس مہلک مرض کو شکست دینے کے لیے درکار فنڈز اکٹھے کریں۔”

وضع حمل کے دوران عورت کو ویکسی نیشن کے تین مراحل سے گزار کر ایم این ٹی سے با آسانی محفوظ رہا جا سکتا ہے ، اور اس پر اندازاً 1.80 امریکی الرز لاگت آتی ہے۔ خاتمے کا منصوبہ: کیوانیز ماں/نومولود کے تشنج کے خاتمے کے لیے اگلے پانچ سالوں میں 110 ملین ڈالرز جمع کرے گا تاکہ ویکسین کی اندازاً 387 ملین خوراکوں کی فراہمی کے لیے درکار سرمایہ کاری کے فرق کو مٹایا جا سکے۔

یہ منصوبہ سب سے زیادہ خطرے سے دوچار ماؤں اور بچوں کی زندگیاں بچانے کےلیے ویکسینز فراہم کرے گا: جن میں وہ مائیں اور بچے شامل ہیں جو انتہائی دور دراز اور مشکل رسائی کے حامل علاقوں؛ تنازعاتی خطوں؛ اور صحت عامہ تک کم رسائی رکھنے والے علاقوں میں رہتے ہیں۔

یو ایس فنڈ فار یونی سیف کے صدر اور چیف ایگزیکٹو آفیسر کیرل اسٹرن نے کہا کہ “کیوانیز کے ساتھ سے ہم ماں/نومولود کے تشنج پر قابو پانے میں کامیاب ہو جائیں گے، میں نے دیکھا ہے کہ اس مرض نے کس طرح خاندانوں کو تباہ و برباد کیا ہے۔ بچہ بیمار ہے، جبکہ مائیں بچوں کو آرام دینے کے قابل نہیں ہیں۔ کیوانیز خطرے سے دوچار عورتوں اور ان کے نومولود بچوں کے لیے اس بیماری کی دیوار کو آخری دھکا لگانے میں مدد کر رہا ہے۔”

ایم این ٹی کے باعث مرنے والی ماؤں اور بچوں کی اکثریت افریقہ، اور جنوبی و مشرقی ایشیا کے 40 ممالک سے تعلق رکھتی ہے۔ یہ بیماری ہر نو منٹ میں ایک بچہ کو مار ڈالتی ہے۔ اس کے اثرات انتہائی تکلیف دہ ہیں، نومولود بچے بار ہا جسم میں اکڑن اور روشنی اور لمس سے انتہائی حساسیت کا شکار ہو جاتے ہیں۔

ٹی لیونی نے کہا کہ “دو بچوں کی ماں کی حیثیت سے، میں دنیا میں نئی زندگی کا خیر مقدم کرنے سے  ملنے والی خوشی کو جانتی ہوں۔ میں تصور بھی نہیں کر سکتی کہ میں اپنے بچے کو بیمار اور ایک ایسے مرض سے مرتا دیکھوں جو کہ ایم این ٹی کی طرح با آسانی قابل علاج ہو، کیوانیز اور یونی سیف کے درمیان نئی شراکت کے ذریعے کئی جانوں کو بچایا جائے گا۔”

خاتمے کا یہ منصوبہ خواتین اور بچوں کو تشنج سے محفوظ کرے گا، یہ منصوبہ دنیا بھر کے خطرات سے دوچار افراد کے لیے دیگر خدمات کی فراہمی کی راہ بھی تخلیق کرے گا، جیسا کہ صاف پانی، غذائیت اور دیگر ویکسینز۔

یونی سیف کے تعاون سے کیوانیز نے بچوں کے لیے اپنی پہلی عالمی مہم کامیابی سے مکمل کی جس کا مقصد بچوں میں آیوڈین کی کمی سے ہونے والی بیماریوں (آئی ڈی ڈی) کا خاتمہ تھا، جو قابل علاج ذہنی نقائص کا سب سے بڑا سبب ہے۔ کیوانیز نے 100 ملین امریکی ڈالرز سے زائد اکٹھے کیے اور کروائے، جنہوں نے 10 ممالک میں زندگیوں کو تبدیل کرنے میں مدد دی۔ اس کوشش کے نتیجے میں دنیا بھر میں آیوڈین ملا نمک استعمال کرنے والے گھرانوں میں بہت زیادہ اضافہ ہوا جو 1990ء میں 20 فیصد سے بھی کم گھرانوں میں استعمال ہوتا تھا اور اب 70 فیصد سے زائد گھرانے آیوڈین ملا نمک استعمال کرتے ہیں، اور یہ کوشش دنیا میں صحت عامہ کی کامیاب ترین مہمات میں شمار کی جاتی ہے۔

خاتمے کے منصوبے کے بارے میں مزید معلومات کے لیے ملاحظہ کیجیے: http://www.TheEliminateProject.org

کیوانیز انٹرنیشنل کے بارے میں

1915ء میں قائم ہونے والا کیوانیز رضاکاروں کی ایک عالمی انجمن ہے جو دنیا کے ہر بچے اور ہر برادری کی دنیا کو تبدیل کرنے سے وابستہ ہے۔ کیوانیز انٹرنیشنل اور اس کے کلبس کے خاندان، جن میں سرکل کے انٹرنیشنل برائے کالج طلبہ، کی کلب انٹرنیشنل برائے نوجوانان، بلڈرز کلب برائے کم سن بچے، کیوانیز کڈز برائے ابتدائی طلبہ اور ایکشن کلب (Aktion Club) برائے معذوری کا شکار بالغان شامل ہیں، 18 ملین سے زائد رضاکارانہ گھنٹوں کے ذریعے سالانہ برادریوں کو مستحکم کرنے اور بچوں کو خدمات پیش کرنے سے وابستہ ہیں۔ کیوانیز انٹرنیشنل فیملی 80 ممالک اور جغرافیائی خطوں کے 5 لاکھ 86 ہزار بالغ اور نوجوان اراکین پر مشتمل ہے۔ کیوانیز انٹرنیشنل کے بارے میں مزید معلومات کے لیے ملاحظہ کیجیے  http://www.kiwanis.org۔

یونی سیف کے بارے میں

یونی سیف نے دنیا کی کسی بھی دوسری انجمن کے مقابلے میں زیادہ بچوں کی جان بچائی ہے۔ 150 سے زائد ممالک میں کام کرنے والی یونی سیف بچوں کو صحت عامہ، صاف پانی، غذائیت، تعلیم، ہنگامی امداد اور دیگر سہولیات فراہم کرتی ہے۔ یو ایس فنڈ فار یونی سیف فنڈ ریزنگ، وکالت اور تعلیم کے ذریعے امریکہ میں یونی سیف کے کام کی حوصلہ افزائی کرتا ہے۔

یونی سیف دنیا بھر میں بچوں میں اموات کی شرح کو کم کرنے کے لیے صف اول میں کام کرنے والا ادارہ ہے۔ پانچ سال سے کم عمر بچوں کی اموات میں کافی حد تک کمی واقع ہوئی ہے اور 1990ء میں 13 ملین کے مقابلے میں 2008ء میں یہ تعداد 8.8 ملین رہ گئی ہے۔ لیکن اب بھی ہر روز 24 ہزار قابل علاج امراض کا شکار ہو کر موت کے گھاٹ اترتے ہیں۔ ہمارا مقصد بچوں کو محفوظ اور صحت بخش بچپن فراہم کر کے ہر قیمت پر اس گنتی کو صفر تک پہنچانا ہے۔ مزید معلومات کے لیے ملاحظہ کیجیے http://www.unicefusa.org۔

ذریعہ: کیوانیز

رابطہ: جو لین گیرنگ، کیوانیز انٹرنیشنل،

+1-317-217-6171،

+1-317-508-6337 (موبائل)،

jgaring@kiwanis.org؛ یا

 

کینی اسکوپ، یو ایس فنڈ فار یونی سیف،

+1-212-922-2634،

+1-917-415-6508 (موبائل)،

kschoop@unicefusa.org