کیوانیز نے عالمی خدماتی منصوبے کے لیے تین حتمی امیدواروں کا انتخاب کر لیا

انڈیانا پولس، 2 فروری/پی آرنیوزوائر-ایشیانیٹ/

اپنے نئے عالمی مقصد کی تلاش میں سرگرداں کیوانیز انٹرنیشنل اور اس کے بین الاقوامی بورڈ آف ٹرسٹیز نے عالمی خدماتی منصوبے کے لیے تین حتمی امیدواروں کا انتخاب کر لیا ہے: گلوبل نیٹ ورک فار نیگلیکٹڈ ٹراپیکل ڈیزیزز کو اُس کی نیگلیکٹڈ ٹراپیکل ڈیزیزز (این ٹی ڈیز) تجویز پر؛ ملیریا نو مور اور کینیڈین صلیب احمر کو اُن کی مشترکہ ملیریا تجویز پر؛ اور یونی سیف کو زچہ و بچہ کے تشنج کی تجویز پر۔

کیوانیز انٹرنیشنل کے صدر پال پالازولو کہتے ہیں کہ “تینوں بقیہ منصوبے بہت متاثر کن ہیں، ان میں سے کوئی بھی عالمی خدمت کا عظیم منصوبہ بن سکتا ہے اور ہر منصوبہ دنیا بھر میں لاکھوں بچوں کی زندگیوں کو بہتر بنا سکتا ہے۔”

گزشتہ موسم خزاں میں کیوانیز نے عالمی معیار کے خدماتی منصوبوں پر تقریباً 200 ملین تجاویز حاصل کیں۔ رواں ماں کے اوائل میں بورڈ نے چار ممکنہ منصوبوں پر پریزینٹیشنز کی سماعت کی۔

پالازولو نے کہا کہ “آج ہم مستقبل کے کیوانیز کے عالمی خدماتی منصوبے پر اپنے اراکین سے گفت و شنید کا آغاز کر رہے ہیں۔ ہمارے 6 لاکھ سے زائد بڑے اور نوجوان اراکین کو www.kiwanis.org/wsp پر جا کر ہر تجویز کو دیکھنے اور آن لائن مذاکراتی فورم میں شرکت کرنے کا موقع حاصل ہے۔”

ویب سائٹ اور مذاکراتی فورم آٹھ زبانوں میں دستیاب ہوگا: انگریزی، ہسپانوی، فرانسیسی، جرمن، اطالوی، ولندیزی، جاپانی اور چینی۔

کیوانیز انٹرنیشل بورڈ اگلے عالمی خدماتی منصوبے کا اعلان جون میں لاس ویگاس میں کیوانیز انٹرنیشنل کنونشن کے موقع پر کرے گا۔

گلوبل نیٹ ورک فار نیگلیکٹڈ ٹراپیکل ڈیزیزز: NTDs

گلوبل نیٹ ورک فار نیگلیکٹڈ ٹراپیکل ڈیزیزز کی تجویز کا ہدف 2003ء سے 2020ء کے درمیان پیدا ہونے والے ایک ارب سے زائد بچوں کے بلوغت کو سفر محفوظ تر بنا کر این ٹی ڈیز کے بوجھ سے بالاتر ہو کر بڑھنے اور فروغ پانے والی پہلی نسل بنانا ہے۔

نیگلیکٹڈ ٹراپیکل ڈیزیزز(NTDs) 13 طفیلی و جراثیمی انفیکشنز کا مجموعہ ہے جو 1.4 ارب افراد کے سب سے عام انفیکشنز ہیں جن میں 600 ملین اسکول جانے کی عمر کے بچے بھی شامل ہیں جو 1.25 ڈالرز فی دن سے بھی کم پر زندگی گزار رہے ہیں۔ ان بیماریوں میں انتڑیوں کے کیڑے، فیل پا اور دنیا میں قابل علاج اندھے پن کا سب سے بڑا سبب تراقوما شامل ہیں۔ بحیثیت مجموعی این ٹی ڈیز اندھا، بدصورت اور بدنام کر دیتی ہیں اور ہلاک بھی کر دیتی ہیں، اس طرح ان بیماریوں سے متاثرہ افراد غربت و بیماری کے چنگل میں پھنس کر رہ جاتے ہیں۔

عالمی این ٹی ڈیز میں سے 90 فیصد پر مشتمل سات عام ترین این ٹی ڈیز سے نمٹنے کے لیے انتہائی موثر بہ لاگت اور آزمودہ طریقے موجود ہیں۔ تقریباً 50 سینٹ فی شخص سالانہ خرچ کے ذریعے ان بیماریوں ےسے محفوظ رہا جا سکتا ہے اور ان کا علاج کیا جا سکتا ہے۔ گلوبل نیٹ ورک 10 سال کے 150 ملین امریکی ڈالرز کے منصوبے کی تجویز دیتا ہے جو عالمی سطح پر ایک ارب امریکی ڈالرز تک کا اثر رکھے گا۔

ملیریا نو مور اورکینیڈین صلیب احمر: ملیریا

ملیریا نو مور (MNM) اور کینیڈین صلیب احمر (CRC) منصوبہ عالمی برادری کی حمایت سے 2015ء تک افریقہ میں ملیریا کے خاتمے کی تجویز پیش کرتا ہے۔

ملیریا افریقہ میں ہر روز 3 ہزار بچوں کو ہلاک کرتا ہے۔ لیکن جدید آلات، زمینی کامیابیوں اور سیاسی و عوامی سطح پر بڑھتی ہوئی حمایت کے ذریعے اب دنیا ملیریا کو شکست دینے کے لیے جتنی صلاحیت کی حامل ہو گئی ہے اتنی پہلے کبھی نہ تھی۔ ملیریا میں سرمایہ کاری کے بڑے فائدے ہو رہے ہیں اور 2000ء سے 2008ء کے درمیان روانڈا، ایرٹریا، زیمبیا، بوٹسوانا اور زنجبار کے جزائر سمیت افریقہ کے متعدد ممالک میں ملیریا کے نتیجے میں بیماریوں اور اموات میں 50 فیصد سے زائد کمی واقع ہوئی ہے ۔

منصوبہ مچھر دانیوں کی تقسیم، تربیت اور تکنیکی مدد اور شعور اجاگر کرنے کے لیے چھ سالوں میں 60 ملین امریکی ڈالرز جمع کرے گا۔

یونی سیف: زچہ و بچہ میں تشنج

زچہ و بچہ میں تشنج (MNT) ہر چار منٹ میں ایک بچے کو زندگی سے محروم کر دیتا ہے۔ ایم این ٹی نئی زندگی کی مسرتوں کو یکایک ایک جذباتی سانحے میں تبدیل کر سکتا ہے۔ اس کے اثرات میں انتہائی تکلیف کے شکار نومولود بچوں میں بار ہا امراض، تکلیف دہ اینٹھن اور روشنی، آواز اور لمس سے بھی انتہائی حساس ہو جانا شامل ہیں۔ حتیٰ کہ ماں کی محبت بھری چمکارنے کی آوازیں اور دلی لگاؤ کا اظہار بھی نومولود کے لیے ناقابل برداشت ہو جاتا ہے۔ چند بچے ہی بچ پاتے ہیں۔ تشنج ماں کی زندگی بھی لے سکتا ہے۔

غریب ممالک میں، جہاں صحت عامہ کی سہولیات تک عورتوں کی رسائی کم ہے، عورتوں کو غیر صحت بخش ماحول میں بچہ پیدا کرنے پر مجبور ہوتی ہیں۔ جہاں تشنج کے جراثیم ہوا، مٹی اور گندے اجزاء میں ہر جگہ پائے جاتے ہیں۔ جراثیم کھلے زخموں اور کٹنے والی ناف سے داخل ماں کے جسم میں داخل ہو سکتے ہیں۔ بچہ ایک مرتبہ جراثیم کا نشانہ بن گیا تو اس کے عصبیاتی نظام پر مہلک زہریلے حملے شروع ہو جاتے ہیں۔

تشنج با آسانی قابل علاج ہے۔ ویکسین کی تین خوراکیں ماؤں اور بچوں کو اس سے محفوظ رکھ سکتی ہیں۔

منصوبہ اس مہلک مرض کے خاتمے کے لیے 110 ملین ڈالرز جمع کرے گا اور 129 ملین ماؤں اور مستقبل کے بچوں کی جانیں بچائے گا۔

عالمی خدماتی منصوبہ کیا ہے؟

دنیا بھر میں بچے اور مقامی افراد صحت عامہ، صاف پانی، محفوظ مکان، غلامی سے تحفظ، تعلیم تک رسائی اور کئی دیگر بنیادی ضروریات تک رسائی کی ضرورت رکھتے ہیں۔ ایک عالمی خدماتی منصوبہ ایک ہدایت یافتہ پروگرام ہے جس میں کیوانیز کے تمام 6 لاکھ اراکین ضرورت مند بچوں کی مدد کے لیے دنیا میں ایک مثبت تبدیلی لانے کی کوششوں میں شامل ہوتے ہیں۔

کیوانیز نے اپنے پہلے عالمی خدماتی منصوبے کو کامیابی سے مکمل کیا اور آئیون کی کمی سے ہونے والی معذوریوں (IDD) کا تقریباً مکمل خاتمہ کیا۔ کیوانیز نے 100 ملین امریکی ڈالرز سے زائد جمع کیے جس نے 89 سے زائد ملکوں میں لوگوں کی زندگیوں میں تبدیلی لانے میں مدد دی۔ یہ اس کی کوششوں کا نتیجہ ہے کہ 1990ء میں آیوڈین ملا نمک استعمال کرنے والے 20 فیصد گھروں کے مقابلے میں آج دنیا بھر کے 70 فیصد سے زائد گھروں میں آیوڈین ملا نمک استعمال ہوتا ہے اور اس کی کوشش کو دنیا کے کامیاب ترین صحت کے منصوبوں میں سے ایک کا نقیب قرار دیا گیا۔

کیوانیز انٹرنیشنل کے بارے میں

1915ء میں قائم ہونے والا کیوانیز رضاکاروں کی ایک عالمی انجمن ہے جو دنیا کے ہر بچے اور ہر برادری کی دنیا کو تبدیل کرنے سے وابستہ ہے۔ کیوانیز انٹرنیشنل اور اس کے سروس لیڈرشپ پروگرامز برائے نوجوانان، جن میں سرکل کے انٹرنیشنل، کی کلب انٹرنیشنل، کی لیڈر، بلڈرز کلب، کیوانیز کڈز، کیوانیز جونیئر اور ایکشن کلب (Aktion Club) شامل ہیں، 19 ملین سے زائد رضاکارانہ گھنٹوں سے وابستہ ہیں اور 100 ملین ڈالرز کی سالانہ سرمایہ کاری کے ذریعے مقامی افراد کو مستحکم کرنے اور بچوں کے لیے خدمات انجام دیتے ہیں۔ کیوانیز انٹرنیشنل فیملی 70 ممالک اور جغرافیائی خطوں کے 6 لاکھ بڑے اور نوجوان اراکین پر مشتمل ہے۔ کیوانیز انٹرنیشنل کے بارے میں مزید معلومات کے لیے ملاحظہ کیجیے www.kiwanis.org۔

ذریعہ: کیوانیز انٹرنیشنل

 

رابطہ: جو لن گارنگ

دفتر: +1-317-217-6171

موبائل: +1-317-508-6337

jgaring@kiwanis.org، یا

 

کرسٹیان لٹل،

دفتر: +1-317-217-6176

klittle@kiwanis.org

 

دونوں برائے کیوانیز انٹرنیشنل