وڈیو: ایون کی عالمی سفیر ریز ودور اسپون نے گھریلو تشدد کی شکار خواتین کو بہتر خدمات فراہم کرنے کی

ریز ودراسپون کی جانب سے ایوان ہائے پارلیمان میں ایون اور ریفیوج کی نئی مہم کی حمایت

لندن، 2 دسمبر/پی آرنیوزوائر-ایشیانیٹ/

ایون کی  عالمی سفیر ریز ودر اسپون نے آج  دارالعوام (ہاؤس آف کامنز ) میں پریس کانفرنس میں گھریلو تشدد کے خلاف ایک نئی بھرپور مہم  کوفروغ دینے  کااعلان کیا۔ یہ مہم ایون کاسمیٹکس اور گھریلو تشدد کے خلاف ایک قومی سطح کے ادارے ریفیوج (Refuge) نے مشترکہ طورپر شروع کی ہے۔ اس موقع پر ریز ودر اسپون عرضداشت (پٹیشن) پر دستخط کرنے والی 1353 ویں فرد بن گئیں جس میں حکومت سے برطانیہ میں گھریلو تشدد کا نشانہ بننے والی خواتین کی مدد میں اضافے کا مطالبہ کیا ہے۔

ملٹی میڈیا نیوز ریلیز دیکھنے کیلئے http://multivu.prnewswire.com/mnr/avon/37733کا مشاہدہ کریں

(تصویر: http://www.newscom.com/cgi-bin/prnh/20091202/NY18605)

یہ تقریب عورتوں کے خلاف تشدد کے خاتمے کے بین الاقوامی دن 25 نومبر کو شروع ہونے والے “فعالیت کے 16 ایام” کے عین وسط میں منعقد ہوئی۔

ایون اور ریفیوج کی اظہار رائے کے چار طریقے مہم لوگوں کو چار سادہ طریقوں سے گھریلو تشدد کے خلاف بولنے پر آمادہ کرتی ہے:

–         ایون کا بااختیاریت والا ہار (نیکلس)  خرید کرپہنیں

–         تشدد کا نشانہ بننے والی خواتین اور بچوں کو مزید خدمات فراہم کرنے کے لیے حکومت برطانیہ سے مطالبات پر مشتمل عرضداشت پر دستخط کیجیے

–         پوسٹرکو ڈاؤنلوڈ کرکے اپنی کمیونٹی میں آویزاں کریں تاکہ خواتین کو یہ معلوم ہوسکے کہ کہاں سے مدد لینی ہے

–         اپنے دوستوں اور رشتہ داروں کو مہم میں شرکت کی دعوت دیں

اس موقع پر ریز ودر اسپون کے ساتھ اثر و رسوخ کی حامل خواتین پینل اراکین موجود تھیں۔ وہ ایون برطانیہ کی صدر اینا سیگاٹی  اورریفیوج کی چیف ایگزیکیٹو سینڈرا ہارلے کے ساتھ نشست پر براجمان ہوئیں۔حقوق انسانی کی سرگرم وکیل اور ریفیوج کی سرپرست بیرونس ہیلینا کینیڈی کیو سی نے صبح کی تقریر کا آغاز کیا اور گھریلو تشدد سے بچنے والی وینڈی ٹرنر ویبسٹر  پینل میں اپنی کہانی سنانے کیلئے شامل ہوئیں ۔رکن پارلیمان لنڈا والتھو نے میزبانی کے فرائض انجام دئیے۔

ایون کی عالمی سفیر ریز ودر اسپون نے کہاکہ “گھریلو تشدد کا شکار خواتین کیلئے یہ بہت مشکل ہوتا ہے کہ وہ کسی کی مدد کیلئے باہر نکل سکیں۔ہم اس مسئلے کو منظر عام پر لانے میں اپنی اور اپنے اطراف چھائی خاموشی کو توڑ سکتے ہیں۔یہی سبب ہے کہ میں یہاں ایون-ریفیو ج کی اظہار رائے کے چار طریقے مہم میں بڑے فخر کے ساتھ مو جود ہوں۔ہم مل کر مختلف کام کرسکتے ہیں۔مل جل کر ہم میں اتنی طاقت ہے کہ  ہم شعور میں اضافہ کرسکیں ،مدد فراہم کرسکیں  اور شدید کیسیوں کیلئے فنڈ جمع کرسکیں”۔

آج کی کانفرنس میں ایون اور ریفیوج  کی جانب سے برطانیہ میں گھریلو تشدد پر کی گئی نئی تحقیق کا بھی اعلان کیا گیا، جس کے مطابق 10 میں سے 9 افراد یعنی (92 فیصد) کا یہ دعویٰ ہے کہ انہیں ایسے کسی شخص کے بارے میں معلومات نہیں ہیں جو گھریلو تشدد سے گذرا ہو۔ یہ اس سرکاری اعداد وشمار کے برخلاف ہے ،جس کے مطابق انگلینڈ اور ویلز میں  ہر چار میں سے ایک خاتون اپنی زندگی کے کسی دور میں گھریلو تشدد کا شکار ہوئی ہے۔تحقیق کے مطابق نصف سے زائد لوگوں (54 فیصد)نے یہ سوال کیا کہ وہ نہیں جانتے کہ انہیں کیا کرنا چاہئے اگر کسی پر گھریلو تشدد سے گذرنے کا شک ہوا ہو۔

صدر ایون برطانیہ اینا سیگاٹی نے کہا:

” خواتین کی کمپنی ہونے کی حیثیت سے، اس طرح کے اہم مقاصد کی حمایت کرکے  خواتین کی با اختیار بنانا ہماری سرشت میں شامل ہے۔یہ ایک بھیانک حقیقت ہے کہ برطانیہ میں چار میں سے ایک خاتون گھریلو تشدد کے تجربے سے دوچار ہے  اور لوگوں کی اکثریت گھریلو تشدد کا شکار ہونے والے کے بارے میں جاننے کے باوجود یہ نہیں جانتی کہ اسے کیا کرنا ہے، کیونکہ ایسی کوئی خدمات موجود نہیں ہیں۔آج کا یہ موقع ان خواتین اور مردوں کی آگہی میں اضافے کا سبب بنے گا جو یا تو اس بارے میں آگہی نہیں رکھتے یا پھر انہیں نہیں معلوم کہ متاثرہ فرد کو کیا مدد فراہم کرنا ہے”۔

ریفیوج کی چیف ایگزیکیوٹیو سینڈرا ہارلے نے کہا:

“یہ افسوسناک  حقیقت  ہے کہ تین میں سے ایک مقامی انتظامیہ نے گھریلو تشدد کے حوالے سے خواتین کو کوئی خدمات پیش نہیں کی ہیں۔متاثرہ خواتین مددکیلئے کہاں جائیں ؟وہ کیا کرسکتی ہیں؟وہ کس سے رابطہ کریں؟ ریفیوج اور ایون نے یہ مہم حکومت پر زور دینے کیلئے شروع کی ہے کہ وہ اس پوسٹ کوڈ لاٹری کو ختم کرے اور گھریلو تشدد کے بڑے مسئلے کے بارے میں آگہی میں اضافہ کرے۔گھریلوتشدد کے خلاف بات کرنے میں ناکامی کا مطلب یہ ہے کہ ہم خود بھی اس مسئلہ کا حصہ بن گئے ہیں”۔

“ریفیوج گذشتہ دوبرس سے ایون کی بھرپور حمایت پر بہت زیادہ شکر گذار ہے۔آج کے معاشی ماحول میں ،جب بہت سی کارپوریشنوں نے اپنے بٹوے بندکرلئے ہیں، یہ ایک بڑی حوصلہ مندانہ بات ہے کہ ایک ایسا مخلص ساتھی ملا ہے ۔ایون کی مدد کے ساتھ ہم ان بہت سی خواتین اور بچوں تک پہنچ سکیں گے جو گھریلو تشدد کی اذیت ناکی میں گھرے ہوئے ہیں”۔

ایون گذشتہ دو برس سے ریفیوج کی مدد کررہاہے اور تشدد کا شکار خواتین اور بچوں کی امدادی خدمات کیلئےطانیہ میں مہم کا 80 فیصد حصہ بااختیاری کے ہار (نیکلیس) اور کڑے (بریسلیٹ) کی شکل میں  امداد کے طورپر دے رہاہے ۔بقیہ20  فیصد برطانیہ میں موجود  یونی فیم (UNIFEM) دے رہاہے۔پوری دنیا میں ہونے والی فروخت 8.1 ملین امریکی ڈالر سے تجاوز کرچکی ہے ، جسے 53ممالک میں فنڈنگ پروگرام کے تحت  دیا جارہاہے ۔ایون کا دعویٰ ہے کہ 2010ء میں وہ گھریلو تشدد کی خیرات کو دگنا کردے گا۔

ذریعہ :ایون پروڈکٹ انکارپوریٹڈ

 

رابطہ: ایون پروڈکٹ انکارپوریٹڈ

نتالی ڈیکون،

+44(0)7725-150853،

Natalie.Deacon@avon.comیا

ایلزبتھ پی برگمین،

+1-212-282-8197،

elizabeth.bergman@avon.com